زبان: اردو

بچے اپنے قریبی لوگوں کے رویے کی نقل اتارتے ہوئے یہ سیکھتے ہیں کہ انہیں دوسروں کے ساتھ کیسے پیش آنا ہے (سماجی اور جذباتی طور پر)۔

بچے اپنے قریبی لوگوں کے رویے کی نقل اتارتے ہوئے یہ سیکھتے ہیں کہ انہیں دوسروں کے ساتھ کیسے پیش آنا ہے (سماجی اور جذباتی طور پر)۔

دوسروں کو دیکھنے اور ان کی نقل اتارنے سے، چھوٹے بچے باہمی سماجی تعاون سیکھتے ہیں۔ وہ قابل قبول اور نا قابل قبول رویہ سیکھتے ہیں۔

بالغوں، بڑے بہن بھائیوں اور بچوں کی جانب سے قائم کی گئی مثالیں بچے کے رویے اور شخصیت کو ڈھالنے میں بہت طاقت ور اور موثر ثابت ہوتی ہیں۔ بچوں کے سیکھنے کا ایک انداز دوسروں کی نقل اتارنا ہے۔ اگر مرد اور عورتیں ایک دوسرے کے ساتھ برابری کی بنیاد پر پیش نہ آئیں، بچہ اس بات کا مشاہدہ کرے گا، سیکھے گا اور شاید اس رویے کی نقل کرے گا۔ اگر بالغ چلائیں گے، تشدد اپنائیں گے، کسی سے نہیں ملیں گے یا تفریق برتیں گے، تو بچے اس قسم کے رویے کو سیکھ لیں گے۔ اگر بالغ دوسروں کے ساتھ نرمی، احترام اور صبر کا مظاہرہ کریں گے تو بچے اس مثال کی تقلید کریں گے۔ اگر ماں اور باپ ایک دوسرے سے پیار کریں گے، ایک دوسرے کا احترام کریں گے، تو ان کے بچے بھی یہی سیکھیں گے اور بالغ ہونے کے بعد ممکن ہے اپنے رشتوں میں بھی اسی رویے کو دہرائیں۔

بچے نقل اتارنا پسند کرتے ہیں۔ ان کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہیے، کیوں کہ اس طرح ان کے تصور اور تخلیقی صلاحیتوں کو نشوونماء ملتی ہے۔ اس عمل سے بچوں کو وہ مختلف انداز سمجھنے میں بھی مدد ملتی ہے جو لوگ ایک دوسرے کے ساتھ سلوک میں اپناتے ہیں۔

The Internet of Good Things