زبان: اردو

کبھی کبھار، کھانسی کسی شدید مسئلے کی نشان دہی کرتی ہے۔ جو بچہ تیز تیز سانس لے رہا ہو اور اسے سانس لینے میں مشکل بھی پیش آرہی ہو، وہ نمونیے کا شکار ہوسکتا ہے، جو پھیپھڑوں میں انفیکشن کی وجہ سے لاحق

کبھی کبھار، کھانسی کسی شدید مسئلے کی نشان دہی کرتی ہے۔ جو بچہ تیز تیز سانس لے رہا ہو اور اسے سانس لینے میں مشکل بھی پیش آرہی ہو، وہ نمونیے کا شکار ہوسکتا ہے، جو پھیپھڑوں میں انفیکشن کی وجہ سے لاحق ہوتا ہے۔ یہ مرض زندگی کے لئے خطرہ ہوتا ہے۔ بچے کو فوری طورپر کسی تربیت یافتہ کارکن صحت یا ڈاکٹر سے علاج کروانے کی ضرورت ہے ، جو اسے کسی مرکز صحت کی طرف ریفر بھی کر سکتا / سکتی ہے۔

بہت سے کیسوں میں کھانسی، زکام، گلے کی خراش اور ناک کا بہنا بغیر کسی دوا کے ہی ٹھیک ہو جاتا ہے۔ لیکن بعض اوقات کھانسی اور بخار نمونیے کی علامت ہوتے ہیں جن کے لئے کسی تربیت یافتہ کارکن صحت یا ڈاکٹر سے علاج کروانے کی ضرورت ہوتی ہے۔

اگر کوئی تربیت یافتہ کارکن صحت یا ڈاکٹر نمونیے کے علاج کے لئے اینٹی بائیٹکس دے، تو اس کی ہدایات پر عمل کرنا اوروہ تمام دوائیں اس کی ہدایات کی روشنی میں بچے کو دینا بہت اہم ہو گا، چاہے بچے کی حالت بہتر محسوس ہورہی ہو۔

بہت سے بچے نمونیے کی وجہ سے گھر پر ہی مر جاتے ہیں کیوں کہ ان کے والدین اور دیکھ بھال کرنے والے دیگر افراد اس بات کا احساس نہیں کرپاتے کہ بیماری کس حد تک سنگین ہے اور اسے فوری طبی دیکھ بھال کی ضرورت ہے۔ نمونیے کی وجہ سے بچوں میں ہونے والی بہت سی اموات کو روکا جا سکتاہے، اگر:

• والدین اور دیکھ بھال کرنے والے دیگر افراد یہ جانتے ہوں کہ تیز تیز سانس لینا اور سانس میں مشکل پیش آنا خطرے کی علامات ہیں ، اور ایسی صورت میں فوری طبی امداد درکار ہے۔ • والدین اور دیکھ بھال کرنے والے دیگر افراد یہ جانتے ہوں کہ طبی امداد کہاں سے حاصل کی جا سکتی ہے۔ • طبی امداد اور موزوں اور کم قیمت اینٹی بائیٹکس فوری طور پر دستیاب ہوں ۔

اگر درج ذیل میں سے کوئی بھی علامات موجود ہوں تو بچے کو فوری طور پر کسی تربیت یافتہ کارکن صحت کے پاس یا کسی کلینک لے جانا چاہئیے:

• بچہ عام حالات کی نسبت زیادہ تیز تیز سانس لے رہا ہے: پیدائش سے 59 دنوں تک - 60 سانس فی منٹ؛ 2 ماہ سے 12ماہ تک - 50 سانس فی منٹ یا زائد؛ 12 ماہ سے 5 سال تک - 40 سانس فی منٹ یا زائد۔ • بچے کا سانس لینے میں مشکل پیش آ رہی ہے یا وہ ہوا کے لئے باربار منہ کھول رہا ہے۔ • جب بچہ اندرکی جانب سانس لیتا ہے تو اس کا سینہ اندر دھنس جاتا ہے (پسلی کا چلنا)، یا ایسا لگتا ہے کہ پیٹ اوپر اور نیچے کی جانب حرکت کر رہا ہے۔ • بچے کی کھانسی کو تین سے زائد ہفتے ہو چکے ہیں ۔ • بچہ ماں کا دودھ یا کوئی اورچیزپینے کے قابل نہیں ہے۔ • بچہ بار بارقے کر رہا ہے۔

حفظان صحت کی سہولتیں فراہم کرنے والوں کی یہ ذمہ دار ی ہے کہ وہ والدین اور دیکھ بھال کرنے والے دیگر افراد کو نمونیے کا شکار بچے کی صحت کو درپیش خطرات کے بارے میں ضروریمعلومات فراہم کریں اور اس کی روک تھام اور علاج کے لئے کئے جانے والے اقدام سے آگاہ کریں۔

The Internet of Good Things