زبان: اردو

بچے دو منٹ سے کم عرصے اور پانی کی بہت قلیل مقدار میں ڈوب سکتے ہیں، یہاں تک وہ نہانے والے ٹب میں بھی ڈوب سکتے ہیں۔ انہیں کبھی بھی پانی میں یا اس کے آس پاس اکیلا نہیں چھوڑنا ،چاہئیے۔

بچے دو منٹ سے کم عرصے اور پانی کی بہت قلیل مقدار میں ڈوب سکتے ہیں، یہاں تک وہ نہانے والے ٹب میں بھی ڈوب سکتے ہیں۔ انہیں کبھی بھی پانی میں یا اس کے آس پاس اکیلا نہیں چھوڑنا ،چاہئیے۔

ڈوبنے سے دماغ میں چوٹ آسکتی ہے یا موت واقع ہو سکتی ہے۔ بچوں کو ڈوبنے سے بچانے کے لئے، والدین اور دیکھ بھال کرنے والے دیگر افرادکو ،چاہئیے کہ وہ ہمیشہ ان بچوں کی کڑی نگرانی کریں جو پانی کے نزدیک یا اس کے اندر ہوں۔ جہاں کہیں پانی ہو، وہاں یہ بات اہم ہوگی کہ:

• کنویں اور پانی کے ٹینکوں کواس طرح ڈھانپ کر رکھیں کہ بچے انہیں کھول نہ سکیں۔ • جب استعمال میں نہ ہوں تو ٹب اوربالٹیوں کو الٹا کرکے رکھیں، اور نہانے کے دوران بچوں کی ہمیشہ نگرانی کریں۔ • بچوں کو سمجھائیں کہ گڑھوں اور نالوں سے دور رہیں۔ • ایسے خاندان جو پانی کے نزدیک رہتے ہیں، گھر کے گرد باڑ لگوائیں اور گیٹ کو بند رکھیں تاکہ چھوٹے بچے پانی میں نہ جاسکیں۔ • تالاب اور پول وغیرہ کے گردمناسب فاصلے سے عمودی سلاخیں لگائیں تاکہ بچے ان میں سے گزر کر پانی میں نہ جا سکیں۔ • وہ خاندان جوبراہ راست پانی پر رہتے ہیں، وہ ٹیرس، کھڑکیوں اور دروازوں پر عمودی سلاخیں لگائیں تاکہ بچے پانی میں نہ گریں۔ • جب بچے چھوٹے ہوں تو انہیں تیرنا سکھائیں۔ • جو بچے تیر نہیں سکتے انہیں پانی میں کھیلنے کے دوران یا کشتی میں سفر کے دوران لائف جیکٹس پہنائیں۔ • جو بچے تیر رہے ہوں ہمیشہ ان کی نگرانی کریں۔ • بچوں کو سکھائیں کہ تیز بہاؤ والی ندیوں پر نہ تیریں اور نہ ہی اکیلے تیریں۔ • سیلاب والے علاقوں میں جب پانی کی سطح بلندہونی شروع ہوتو بچوں پر محتاط نظر رکھیں ؛ اس بات کو یقینی بنائیں کہ سوجھ بوجھ رکھنے والے بچوں سمیت گھر کے تمام ارکان کو ان محفوظ جگہوں کا اچھی طرح علم ہے جہاں ضرورت پڑنے پر گھر چھوڑ کر جایا جا سکتاہے۔

ڈوبنے کی صورت میں ابتدائی طبی امداد کے لئے، اس باب کے اختتام کی طرف ریفر کریں۔

The Internet of Good Things